غزل-21 آج پھر حشر بپا ہو جائے

September 10, 2021
Gazal
16 0

Poet: Tanveer Iqbal

آج پھر حشر بپا ہو جائے
حالِ دل دشتِ بلا ہو جائے
 
جسدِ تاریک موت طاری ہے
روحِ بےنور رفع ہو جائے
 
نہیں لگن کو عقل سے نسبت
جگر ذہن سے جدا ہو جائے
 
میری تاریک و تنگ راہِ سفر
کسی رہبر کی ضیا ہو جائے
 
زندہ رہنے کی قسم تیرے بعد
وہ عہد کیا جو وفا ہو جائے
 
صنم پہ مٹ کے جیوں مٹنے کو
یہ طرزِ طور روا ہو جائے
 
غمِ جاناں کےہم نہیں قائل
ذات جب تک نہ فنا ہو جائے
 
ہو منور خیالِ یار سے دل
تو ہر اندیشہ دفع ہو جائے
 
میں سائل رہا جہاں بھی گیا
کسی محسن کی عطا ہو جائے
 
میرا کچھ بھی نہیں رہے میرا
تا دم چاہ پہ فدا ہو جائے
 
خوار ہو جائیں مرے روزوشب
تُو اگر مجھ سے خفا ہو جائے
 
آج بس جی لے زندگی تنویر
کیا خبر کیا فردا ہو جائے
 
تنویر اقبال
Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Open chat
1
Hello,
How can I help you?