غزل-13 بس خواہش تھی کوئی میرا قدرداں ٹہرے

January 17, 2021
Gazal
35 0

Poet: Tanveer Iqbal

بس خواہش تھی کوئی میرا قدرداں ٹہرے
رسمِ دنیا کو سہی، کوئی مہرباں ٹہرے
 
جب بھی پایا خود کو بے سروسامانی میں
ہم اُن کی نظر میں مطلوبِ امتحاں ٹھہرے
 
نالہِ دل نے کیا خوب اثر پایا ہے
حرفِ سخن میری آہوں کے ترجماں ٹہرے
 
آغازِ گردشِ دوراں سے اب تلک شب و روز
اتنے مشکل ہوئے کہ آخر آساں ٹہرے
 
کاوشیں کارگر کیسی جو ہو قسمت ناقص
تدبیر کسطرح تقدیر سے نہاں ٹہرے
 
مناؤ روز جشن حسرتوں کے موسم کا
کیا خبر کتنی دیر یہ رتِ خزاں ٹہرے
 
کیا غلط ہو جو غمِ عشق غمِ زیست بنے
ورنہ یہ دل تو بر حال پریشاں ٹہرے
 
ناآشنا سے بھی آزردہ صفت غیب نہیں
مری آنکھوں میں داغِ دل یوں نمایاں ٹہرے
 
کیوں فخر نہ کروں اپنی گریباں چاکی پر
مرا چرچا جو تری بزم کا عنواں ٹہرے
 
جو پڑا ہو چراغ آندھیوں کی رہ گزر
وہ بجھنے سے بھلا کیسے گریزاں ٹہرے
 
زخم کو ڈھانپ، تیروں کو چھپا لے تنویر
کہ تیرا معتبر نہ ملزمِ کماں ٹہرے
 
تنویر اقبال

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Open chat
1
Hello,
How can I help you?