غزل-8 فضا میں اٹھتا گردوغبار کیسا ہے

December 17, 2020
Gazal
39 0

Poet: Tanveer Iqbal tanveer.Iqbal@outlook.com

فضا میں اٹھتا گردوغبار کیسا ہے

مری آنکھوں میں اشکوں کا بار کیسا ہے

ہر آہٹ پہ دل زور سے دھڑکتا ہے

یادوں کی دستکوں کا شمار کیسا ہے

واضح ہوتے جاتے ہیں دھندلائے چہرے

مری نظروں میں رخِ گل و خار کیسا ہے

مرا آتش فشاں بجھا پڑا تھا مدت سے

دل پھاڑنے کا طیش پھر سوار کیسا ہے

جسے چاہا تھا جان و حیات سے بڑھ کر

اُسی کے خنجر کا دل پہ وار کیسا ہے

بھر جانے کو ہی تھے تمام زخمِ دل

اب یہ نیا نشتر آرپار کیساہے

فضاءِ دل میں نمی برقرار تھی، پھر یہ

نیا موسم میں رنجِ سوگوار کیسا ہے

بھلا چکا تھا دفنا کے سبھی آرزوئیں

حسرتوں کا دوبارہ ابھار کیسا ہے

خوشی ہوتی ہے غم کو گلے لگانے میں

مرے دکھ بھی اب کہیں یہ شکار کیسا ہے

ٹوٹ کر پھر ہوا لہو لہو پیمانہِ دل

بیتی جفاؤں کا یہ سنگسار کیسا ہے

مرے جنون کی حدوں کا دائرہ تھا وہ

وجود پہ تنگ ہوتا حصار کیسا ہے

مار کر زندہ درگور کر گیا جو مجھے

پھر اُسی قاتل کا انتظار کیسا ہے

ذہن اکسائے سارے بدلے چکائے جائیں

مگر دل میں درگزر کا یہ عار کیسا ہے

دھڑکنوں پر ہوتی جاتی ہے بیکسی طاری

اب تک سانسوں پہ مرا اختیار کیسا ہے

تنویر اقبال

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Open chat
1
Hello,
How can I help you?